Perfect Urdu Latest Questions

Sajid
  1. ج: آخری شعر میں شاعر نے اللہ تعالیٰ سے یہ دعا مانگی ہے کی جو علم ، محنت کرنے کی توفیق اور ایجادات سے آپ نے یورپ کو نوازا ہے اسی طرح سے ہمیں بھی علم ،محنت کرنے کی توفیق اور ایجادات سے نواز دے کیونکہ ہم بھی تو تیرے ہی بندے ہیں۔

    ج: آخری شعر میں شاعر نے اللہ تعالیٰ سے یہ دعا مانگی ہے کی جو علم ، محنت کرنے کی توفیق اور ایجادات سے آپ نے یورپ کو نوازا ہے اسی طرح سے ہمیں بھی علم ،محنت کرنے کی توفیق اور ایجادات سے نواز دے کیونکہ ہم بھی تو تیرے ہی بندے ہیں۔

    See less
    • 0
Sajid
  1. ج :خوشکی اور سمندر ہمت والوں کا راستہ نہیں روک سکتی ہے۔

    ج :خوشکی اور سمندر ہمت والوں کا راستہ نہیں روک سکتی ہے۔

    See less
    • 0
Sajid
  1. ج: بجلی ممالک کی تفریق ٹیلی ویژن اور ٹیلی فون کی صورت میں مٹاتی ہے۔

    ج: بجلی ممالک کی تفریق ٹیلی ویژن اور ٹیلی فون کی صورت میں مٹاتی ہے۔

    See less
    • 0
Sajid
  1. ج: بجلی کے کرشمے جو اس نظم میں بیان کیے گئے ہیں وہ یہ ہیں کہ بجلی کی مدد سے انسان کو آرام پہنچتا ہے بجلی کی مدد سے بلب، پنکھے ،گھنٹیاں ،آٹے کی چکی، لفٹ ، ٹیلی ویژن اور ٹیلی فون چلتے ہیں اور بجلی کی ایجاد نے انسانی زندگی کو آسان بنا دیا ہے۔

    ج: بجلی کے کرشمے جو اس نظم میں بیان کیے گئے ہیں وہ یہ ہیں کہ بجلی کی مدد سے انسان کو آرام پہنچتا ہے بجلی کی مدد سے بلب، پنکھے ،گھنٹیاں ،آٹے کی چکی، لفٹ ، ٹیلی ویژن اور ٹیلی فون چلتے ہیں اور بجلی کی ایجاد نے انسانی زندگی کو آسان بنا دیا ہے۔

    See less
    • 0
Sajid
  1. جواب: اس قصیدے میں احمد شاہ ابدالی کے حملے کی وجہ سے ہونے والی دلی کی بربادی اور ویرانی کا ذکر موجود ہے اور مختلف پیشوں سے وابستہ لوگوں کی مفلسی، لاچاری اور بے بسی کا خاکہ پیش کیا گیا ہے، اسلئے اس قصیدے کو شہر آشوب قرار دیا گیا ہے۔

    جواب: اس قصیدے میں احمد شاہ ابدالی کے حملے کی وجہ سے ہونے والی دلی کی بربادی اور ویرانی کا ذکر موجود ہے اور مختلف پیشوں سے وابستہ لوگوں کی مفلسی، لاچاری اور بے بسی کا خاکہ پیش کیا گیا ہے، اسلئے اس قصیدے کو شہر آشوب قرار دیا گیا ہے۔

    See less
    • 0
Sajid
  1. جواب: ایسی نظم جس میں زمانہ بدل جانے ،لوگوں کے اخلاق و عادات بگڑ جانے، معاملات کے درہم برہم ہو جانے ،شرفا کی خوداری اور ذلیلوں کی گرم بازاری اور کسی شہر کی بربادی ، اور تباہ کاری کا ذکر ہو اسے شہر آشوب کہتے ہیں۔ اس صنف کی پہچان اس کے مخصوص موضوع سے ہوتی ہے۔اس صنف کو غزلیہ ،شہر آشوب ، مسدس ،مخمس ،مثمRead more

    جواب: ایسی نظم جس میں زمانہ بدل جانے ،لوگوں کے اخلاق و عادات بگڑ جانے، معاملات کے درہم برہم ہو جانے ،شرفا کی خوداری اور ذلیلوں کی گرم بازاری اور کسی شہر کی بربادی ، اور تباہ کاری کا ذکر ہو اسے شہر آشوب کہتے ہیں۔ اس صنف کی پہچان اس کے مخصوص موضوع سے ہوتی ہے۔اس صنف کو غزلیہ ،شہر آشوب ، مسدس ،مخمس ،مثمن ،وغیرہ ہیتوں میں لکھا جاتا ہے۔

    See less
    • 0
Sajid
  1. جواب: سودا نے اس قصیدے میں جن پیشوں کا ذکر کیا ہے ان میں سوداگری ،شاعری،مثنوی خوانی ،معلمی ، درویشی بطورپیشہ ،سپاہی، ملائی وغیرہ ہیں۔

    جواب: سودا نے اس قصیدے میں جن پیشوں کا ذکر کیا ہے ان میں سوداگری ،شاعری،مثنوی خوانی ،معلمی ، درویشی بطورپیشہ ،سپاہی، ملائی وغیرہ ہیں۔

    See less
    • 0